Tag Archives: Sharif

مغلوں اور بقالوں کے دور میں لاہوری برج

عدنان خان کاکڑ

Chauburgi
لاہور برصغیر کا وہ شہر ہے جو ہر دور میں اہم رہا ہے۔ خواہ رامائن کا دور ہو جب رام چندر کے بیٹے لوہ کے نام پر اس شہر کا نام رکھا گیا تھا، یا ہندو شاہی کا دور جب لاہور ایک بڑی ہندو شاہی سلطنت کا دارالسطنت تھا جو پنجاب سے لے کر موجودہ افغانستان کے مزار شریف تک پھیلی ہوئی تھی، یا غزنوی دور تھا جب لاہور سلاطین غزنی کا پایہ تخت بنا، یا پھر خاندان غلاماں کا زمانہ تھا جس کا پہلا سلطان قطب دین ایبک یہیں انارکلی میں جاں ہار گیا۔
اور مغلوں کی تو بات ہی کیا تھی۔ ہمایوں کے بھائی کامران مرزا کی غالباً پورے برصغیر میں ایک ہی نشانی بچی ہے۔ دریائے راوی میں کامران کی بارہ دری۔ اور پھر اکبر آیا تو چودہ سال تک اس نے لاہور سے اپنی عظیم سلطنت کو چلایا۔ جہانگیر یہاں دفن ہوا اور شاہجہاں یہاں پیدا ہوا۔ اورنگ زیب کے عہد میں بادشاہی مسجد اور قلعے کا عالمگیری دروازہ تعمیر ہوئے۔
شاعرانہ طبیعت رکھنے والے مغلوں کے اس محبوب شہر نے ان سے خراج محبت پانے میں کمی نہ دیکھی۔ یہاں قلعے میں شیش محل اور دیوان عام و خاص بنے۔ نور جہاں اور جہانگیر کے عالیشان مقبرے یہیں تعمیر ہوئے۔ شالیمار باغ بنا۔ مغل باغات کے شہر لاہور میں اور ایک اور وسیع باغ اورنگ زیب کی بیٹی زیب النسا نے بنوایا۔ روایت ہے کہ یہ وسیع و عریض باغ موجودہ نواں کوٹ اور سمن آباد سے لے کر قدیم شہر کی فصیلوں تک پھیلا ہوا تھا۔ اس کے چند ہی آثار باقی بچے ہیں۔ چند بچے کھچے برج سمن آباد اور نواں کوٹ کے گھروں کے کونوں کھدروں میں موجود ہیں اور کسی وقت بھی کسی نئے گھر کی تعمیر کے لیے ڈھائے جا سکتے ہیں۔ اس کی صرف ایک نمایاں نشانی بچی ہے۔ چوبرجی دروازہ۔

Continue reading